پوپ فرانسس کی آیت اللہ سیستانی سے ملاقات، امن کے فروغ پر زور

میڈیا رپورٹس کے ملاقات میں دونوں مذہبی رہنماؤں نے عراق کے اقلیتی عیسائیوں کے حفاظت کے حوالے سے بات چیت کی گئی۔

دوہزار تین میں عراق پر امریکی حملے کے بعد ملک میں عیسائی اقلیت کو تشدد کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

آیت اللہ سیستانی کے افس سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ بات چیت کے دوران امن کے فروغ پر زور دیا گیا۔ آیت اللہ سیستانی نے اس بات پر زور دیا کہ عیسائی شہریوں کو بھی دوسرے عراقیوں کی طرح امن و سلامتی اور مکمل آئینی حقوق کے ساتھ جینے کا حق ہے۔

کیتھولک عیسائیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس نے عراق کے کمزور ترین طبقے کی حمایت میں آواز اٹھانے پر آیت اللہ علی سیستانی کا شکریہ ادا کیا۔

دورہ عراق کے دوران پوپ فرانسس کی حفاظت کے لیے عراقی سیکیورٹی فورسز کے 10 ہزار کے قریب اہلکار تعینات کردیے گئے ہیں، جبکہ جگہ جگہ بینرز اور پوسٹرز پوپ کے استقبال کے لیے آویزاں کیے گئے ہیں۔ بل بورڈز پر پوپ کی تصاویر کے ساتھ درج ہے،” ہم سب بھائی ہیں۔

پوپ فرانسس کےدورے کا مقصد عراق کی عیسائی آبادی کا اعتماد بحال کرنا اور کئی سالوں سے اس ملک میں بد امنی کے شکار لوگوں کے مابین رواداری اور بھائی چارگی کا فروغ ہے

Read Previous

How to Write My Essay Online – Tips For a Successful Course of Study

Read Next

Amet dolorem quiquia labore amet quaerat modi.

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے