حرم امام رضا کرونا کے ٹیسٹ کے لئے 6 هزار کیٹس اور دس لاکھ N95ماسک، ملک کے اسپتالوں میں تقسیم کررہا ہے

آستان قدس رضوی کے نائب متولی مصطفی خاکسار قہرودی نے آستان نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کرونا وائرس پر قابو پانے کے لئے آستان قدس رضوی کی جانب سے ملک کے محکمہ صحت اور اس سے وابستہ اداروں کے ساتھ تعاون اورمدد کا سلسلہ جاری ہے اورملک کے اسپتالوں کو چھے ہزار ٹیسٹ کیٹس اوردس لاکھ این پچانوے ماسک کی فراہمی بھی اسی سلسلے کے ایک کڑی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آستان قدس رضوی اپنی توانائیوں اور وسائل و ذرائع  کا بھرپوراستعمال کرتے ہوئے اپنی ذمے داری سمجھتا ہے کہ عام شہریوں کی صحت و سلامتی کے تحفظ اور علاج و معالجے کی ضروریات پورا کرنے کے ساتھ ساتھ ان کے معاشی مسائل کو بھی حل کرے ۔ انہوں نے کہا کہ آستان قدس رضوی اپنے تمام وسائل و ذرائع کو حتی الامکان معاشرے کی مشکلات کو حل کرنے کے لئے استعمال کررہا ہے 
حرم مطہر رضوی کے نائب متولی نے کہا کہ اس سلسلے میں ملک کے اینٹی کرونا نیشنل ہیڈ کوارٹر کے فیصلے کے مطابق ، آستان قدس رضوی کے اقتصادی شعبے نے دس لاکھ   N95  ماسک اور پانچ لاکھ لیٹر طبی الکحل جو جرائیم کش دوا‎ؤں کی تیاری میں استعمال ہوتا ہے بیرون ملک سے درآمد کیا ہے جنھیں آستان قدس کی جانب سے تہران، خوزستان، خراسان رضوی، مازندران اور فارس جیسے صوبوں کے اسپتالوں میں تقسیم کیا جارہا ہے
آستان قدس رضوی کے نائب متولی نے یہ بھی بتایا کہ ایک میلین N95 ماسک جو خریدے گئے تھے ان میں سے پانچ لاکھ ماسک ملک میں پہنچ چکے ہیں اور اگلے ہفتے تک ایک پانچ لاکھ ماسک کی ایک اور کھیپ  ایران پہنچ جائے گی 
 آستان قدس رضوی کے نائب متولی خاکسار قہرودی نے یہ بھی بتایا کہ کرونا کی بیماری کی تشخیص کے 6 ہزار ٹیسٹ کیٹس جو درآمد کئے جا رہے ہیں، ان کی کوالٹی بین الاقوامی معیار کے مطابق ہے۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ چونکہ یہ وبا دنیا کے تمام ملکوں میں پھیل چکی ہے اس لئے کہیں سے بھی اس آئٹم کی خریداری اور درآمدات میں بے حد  دشواری کا سامنا ہے۔ لیکن پھر بھی آستان قدس رضوی کے اقتصادی شعبے نے اپنی بھرپور کوشش کرکے، بروقت بین الاقوامی کوالٹی کے معیار کے مطابق اور مناسب قیمت پر ان طبی ساز و سامان کو درآمد کیاہے   انہوں نے کہا کہ ہم نے اپنے اس اقدام سے ملک کے قیمتی زرمبادلہ اور سرمایہ کو بھی ضائع ہونے سے بچانے کی کوشش کی ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ وزارت صحت سے اس سلسلے میں مناسب اجازت نامہ لیا جا چکا تھا۔ انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ یہ طبی ساز و سامان کی یہ درآمدات اس زرمبادلہ سے خریدی گئی ہے جو آستان قدس رضوی کی برآمدات سے حاصل ہوئی تھی اور اس طرح ایک ڈالر بھی مملکت کے زرمبادلہ کے ذخائر سے خرچ نہیں کیا گیا ۔   
انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ آستان قدس رضوی نے 15 ارب ریال یعنی تقریبا” ایک لاکھ ڈالر کی مساوی رقم ، امام رضا (ع) اسپتال کو امداد کے طور پردی ہے جہاں اس وقت کرونا کے مریضوں کا علاج ہورہا ہے۔

کرونا سے پیدا شدہ مشکلات کے شکار ضرورت مندوں کو آستان قدس رضوی کی امداد
آستان قدس رضوی کے نائب متولی نے اپنی گفتگو کو جاری رکھتے ہوئے کہا کہ کرونا وائرس نے زندگی کے مختلف شعبوں کو متاثر کیا ہے۔ خصوصی طور پر  معاشرے کے غریب اور  کم آمدنی والے افراد کے معاشی مسائل اس بیماری کی وجہ سے بڑھ گئے ہیں اور غریب آدمی  اس سے بری طرح متاثر ہوا ہے۔  انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں آستان قدس رضوی نے کرونا وائرس کے پھیلنے کے بعد پیدا ہونے والی مشکلات کو مدنظر رکھتے ہوئے، معاشرے کے غریب لوگوں کی معاشی مشکلات کو دور کرنے کے لئے غذائی اشیا اورطبی وسائل وادویات کے پچاس ہزار پیکٹس مشہد کے مضافاتی علاقوں میں پسماندہ علاقوں کے لوگوں کے درمیان تقسیم کئے ۔ ان تقسیم شدہ پیکٹوں کی کل مالیت 100 ارب ریال یا تقریبا” 67 ہزار ڈالرکے برابر ہے۔    
خاکسار قہرودی نے یہ بھی بتایا کہ آستان قدس رضوی نے پانچ لاکھ ماسک ، غریب لوگوں کے درمیان مفت تقسیم کئے ہیں۔ اسی طرح ملک کے وہ اسپتال جو کرونا میں مبتلا  لوگوں کے معالجے میں مشغول ہیں ، انہیں امام رضا علیہ السلام کے دسترخوان سے تبرک بھیجا گیا ہے جو  ایک لاکھ افرادکے کھانے کے لئے تھا۔ اس کے علاوہ پچاس ہزار مخصوص تبرک کے پیکٹ بھی پورے ملک کے اسپتالوں کے معالجین کے لئے بھیجنے کا انتظام کیا جا رہا ہے۔     
 

Read Previous

مسلسل 9دن سے 24گھنٹے کورونا ہسپتال کی تعمیر کا کام جاری، اب تک مکمل ہونے والا کام

Read Next

دنیا آج ایک نجات دہندہ کی ضرورت زیادہ محسوس کر رہی ہے: آیت اللہ خامنہ ای

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے